اعجاز مدنی

ایبٹ آباد

ہزارہ ڈویژن کو صوبے کا درجہ دلانے کےلئے حال ہی میں قائم ہونے والی  ھزارہ موومنٹ کے چیئرمین اسد جاوید خان نے حکومت سے مطالبہ کیا ہے کہ 12اپریل 2010 ء کو شہید ہونے والے ہزارے والوں کے لواحقین کو ایک کروڑ روپے فی کس کے حساب سے دیت ادا کی جائے،

متاثرہ خاندانوں کو ایک سرکاری نوکری اور نئی جوڈیشل انکوائری تشکیل دے کر واقعہ کے ذمہ داران کے خلاف قانونی کارروائی کی جائے

ایبٹ آباد میں کرونا سے 4 اموات،37 کیسز،11مقامات سیل

ایبٹ آباد جیل میں قرآن پاک کی مبینہ بیحرمتی ،شہر میں‌شدید کشیدگی

جبکہ ہزارے وال پارلیمنٹیرینز وفاق اور صوبہ کی اسمبلیوں میں صوبہ ہزارہ کیلئے قرارداد منظور کروائیں۔ ان خیالات کا اظہار انہوں نے 12اپریل کے حوالے سے ایک پریس کانفرنس کے دوران کیا۔

اس موقع پر ان کے ہمراہ مسلم لیگ ن ضلع ایبٹ آباد کے جنرل سیکرٹری راجہ آفتاب، تحصیل صدر محمد فیاض عباسی، پیپلز پارٹی کے سٹی صدر ملک محمود سلطان اور ہزارہ موومنٹ کے حاجی شیراز سمیت دیگر عہدیدار و کارکنان کی بڑی تعداد بھی موجود تھی۔

اسد جاوید خان نے کہا کہ ملک میں نئے انتظامی یونٹس بنائے جائیں اور ہزارہ کو اولین ترجیح کے تحت صوبہ بنایا جائے۔حقوق، اختیارات اور شناخت کے نعرے پر مبنی تحریک کی وضاحت کرتے ہوئے ان کا کہنا تھا کہ ہزارہ موومنٹ غیر سیاسی تحریک ہے

جس میں کسی بھی سیاسی جماعت کا ورکر شامل ہو سکتا ہے تاہم یہ لوگ اپنی پارٹیوں کے پلیٹ فارم سے صوبہ ہزارہ کیلئے جدوجہد کو مقدم رکھیں گے۔انہوں نے کہا کہ ماضی میں اگر صوبہ ہزارہ تحریک کو سیاسی جماعت نہ بنایا جاتا تو صوبہ کی منزل بڑی حد تک کامیابی سے ہمکنار ہو چکی ہوتی۔

اسد جاوید خان نے کہا کہ ہم نے 26مارچ کو تین مطالبات سامنے رکھے تھے جن میں شہداء ہزارہ کے خاندانوں کو دیت ادائیگی، سرکاری نوکری اور جوڈیشل انکوائری کے بعد ذمہ داران کو سزا دلوانا شامل تھا۔

تاہم حکومت نے شہداء کو محض دس لاکھ روپے ادائیگی کا اعلان کیا جبکہ اس بات کی وضاحت نہیں کی گئی کہ یہ رقم کس مد میں دی جارہی ہے حالانکہ حکومت اگر دیت کی مد میں رقم دینا چاہتی ہے تو یہ رقم ایک کروڑ روپے فی کس تک دی جانی چاہئے۔

اسد جاوید نے مزید کہا کہ صوبہ ہزارہ قرارداد کے بارے میں سیاسی جماعتوں سے روابط اور اسمبلی میں کردار ادا کرنے کیلئے کمیٹی تشکیل دی جارہی ہے جس میں اضلاع کے صدور و جنرل سیکرٹری شامل ہوں گے، علاوہ ازیں اپنے مطالبات کیلئے ہم نے دو ماہ کی ڈید لائن دے رکھی ہے جس کے بعد پوری قوت سے مطالبات منوانے کیلئے جدوجہد کا آغاز کیا جائے گا۔

دریں اثناء تحریک صوبہ ہزارہ کے دوران جاں بچق اور زخمی ہونے والوں کی یاد میں ہزارہ موومنٹ نے آج 12اپریل کو ایبٹ آباد سمیت مختلف چھوٹۓ شہروں میں موٹر سائیکل ریلیاں نکالنے کا بھی اعلان کیا ہے

پروگرام سے متعلق ایک بیان میں اسد جاوید خان کا کہنا تھا کہ حویلیاں، لوئر تناول، گلیات اور ضلع ایبٹ آباد کے کارکنان ریلی میں شرکت کریں گے انہوں نے کہا کہ ہماری تحریک پر امن جدوجہد پر یقین رکھتی ہے اور صوبہ ہزارہ کی منزل کے حصول تک ہم اپنی جدوجہد جاری رکھیں گے۔

 

Translate »