رومان ملک ،مانسہرہ


خیبر پختونخواہ کے ضلع مانسہرہ کے گائوں کے ایک حجرے میں عالمی شہرت یافتہ ترک ڈرامہ سیریل ارطغرل کی شوٹنگ ہورہی ہے لیکن یہ ڈرامہ ترکی یا اردو زبان میں نہیں بلکہ مقامی بولی یعنی ہندکو میں تیار کیا جا رہا
اس ڈرامے کے ڈائریکٹر اور پروڈیوسر ضلع مانسہرہ کے سینئر آرٹسٹ منظور سرحدی ہیں

جو اپنے محدود وسائل کے ساتھ گذشتہ تقریبا ایک سال سے اپنی مدد آپ کے تحت اس ڈرامے پر کام کررہے ہیں ، ان کا کہنا ہے اس ڈرامے کے ذریعے ہم اپنی مادری زبان کو فروغ دینا چاہتے ہیں تاکہ بالخصوص نئی نسل جو اپنی زبان سے دور ہوتی جارہی ہے اسے ایک بار پھر لگائو محسوس ہو


یہ بھی پڑھیں 

ڈرامہ ارطغرل نے ایک سال میں 10 کروڑ ناظرین کا نیا ریکارڈ بنالیا

ارطغرل رزم و بزم کا نیا عنوان کیسے بنا ؟


یہ ڈرامہ چونکہ سوشل میڈیا پلیٹ فارمز مثلا یوٹیوب ،فیس بک وغیرہ پر شیئر ہوتا ہے ،اس لئے اس کی شوٹنگ موبائل فون کے ذریعے کی جاتی ہے،ڈرامے میں تمام فنکار رضاکارانہ طور پر حصہ لیتے ہیں ،جو اکثر سیٹ یا لوکیشن پر پہنچنے کیلئے خود اپنی جیب سے خرچ کرتے ہیں ،مقامی سطح پر لوگ اس ڈرامے کو کافی پسند بھی کرتے ہیں
اگرچہ اس ڈرامہ میں شامل تمام اداکار مقامی ساختہ کاسٹیوم استعمال کرتے ہیں اور کردار بھی وہی ہیں جو ارطغرل میں شامل ہیں لیکن اس ڈرامہ میں تاریخ سے زیادہ مزاح کا پہلو نمایاں ہے ۔
اس حوالے سے پروڈیوسر منظور سرحدی کا کہنا ہے کہ اگر ان کے پاس وسائل ہوں تو وہ اپنی ٹیم کے ساتھ مزید اور بہتر پروڈکشن پیش کرسکتے ہیں
لیکن چونکہ فی الحال ایسا کچھ بھی نہیں ،ہماری شوٹنگ موبائل فون کے ذریعے ہوتی ہے ،جسے ہم ایڈیٹنگ کے بعد سوشل میڈیا پر ڈال دیتے ہیں ٹیم اور جذبہ تو موجود ہے لیکن وسائل آڑے آرہے ہیں ۔

ڈرامے میں شامل آرٹسٹ اقبال کلوروی کے بقول اگر بہتر معیار اور منصوبہ بندی سے ڈرامہ تیار کیا جائےتو اس کے نتائج بھی بہتر مل سکتے ہیں
ان کے بقول وہ اس ڈرامے کے ذریعے ہندکو بولی کو بھی فروغ دینا چاہتے ہیں ۔

اگرچہ ڈرامہ سیریل ارطغرل رزمیہ تاریخی ڈرامہ ہے ،لیکن ہندکو زبان میں تیار ہونے والے اس ڈرامے کو فکاہیہ رنگ دیا جارہا ہے
ڈرامے کے ڈائریکٹر منظور سرحدی کا اس بارے میں کہنا ہے ہم اپنے ناظرین کو اپنا پیغام لطیف پیرائے میں پہنچانا چاہتے ہیں ،

Translate »