Spread the love

آزادی ڈیسک


طالبان کی افغانستان کے مختلف شہروں کی جانب پیش قدمی جاری ،دو روز قبل ہی طالبان نے تاجکستان کی سرحد کے ساتھ واقع اہم شہر پر بھی قبضہ کرلیا تھا

جمعرات کے روز سے طالبان کی جانب سے قندوز شہر کے محاصرے کی خبریں عام ہونے کے بعد مقامی آبادی میں شدید بے چینی پائی جاتی ہے

قندوز شہرسے آنے والی خبروں کے مطابق شہر کے مختلف علاقوں اور سڑکوں میں سرکاری فوج گشت کررہی ہے ،جبکہ طالبان نے شہر کا محاصرہ کررکھا ہے ۔جبکہ کچھ علاقوں میں جھڑپوں کی اطلاعات بھی موصول ہورہی ہیں


یہ بھی پڑھیں

  1. امریکہ نائن الیون سے پہلے طالبان حکومت کو ختم کرنے کا فیصلہ کرچکا تھا ،رپورٹ
  2. امریکی انخلاء کے قریب آتے ہی طالبان کی پیش قدمی تیز،درجنوں اضلاع پر قبضہ
  3. پاکستان افغانستان کے اندرونی مسائل کا ذمہ دار نہیں،شاہ محمود قریشی
  4. بھارت نے افغان طالبان قیادت کیساتھ روابط بڑھانے کی کوششیں تیز کردیں

واضح رہے کہ حالیہ سالوں کے دوران طالبان نے قندوز شہر کا مختصر عرصہ کیلئے کنٹرول سنبھالنے کے اسے چھوڑ دیا تھا ۔تاہم امریکی و اتحاد ی فوجوں کے انخلاء کا وقت قریب آنے کے ساتھ ہی طالبان ہر گزرتے دن کے ساتھ کابل کی جانب پیش قدمی تیز کئے ہوئے ہیں
جبکہ گذشتہ ڈیڑھ مہینوں کے دوران انہوں نے درجنوں اہم اضلاع ،شاہراہوں اور شہروں کا کنٹرول سنبھال لیا ہے ۔

21 افراد کے مارے جانے کی تصدیق

قندوز شہر کے قدرت اللہ نامی ایک تاجر نے میڈیا کوبتایا کہ محاصرے کی خبر عام ہوتے ہی گردونواح سے بڑی تعداد میں لوگ شہر میں داخل ہوگئے ہیں ،جبکہ سرکاری فوج کے نئے دستے بھی شہر میں تعینات کردیئے گئے ۔اگر سرکاری فوج طالبان کے خلاف آپریشن شروع نہیں کرتی تو خدشہ ہے کہ شہر کا محاصرہ طویل ہوجائے گا

انہوں نے بتایا کہ رواں ہفتے کے دوران شہر کے زیادہ تر کاروباری مراکز بندرہے اور سڑکوں سے گاڑیاں غائب ہیں

صحت عامہ کے شعبہ کے ڈائریکٹر کے بقول گذشتہ ایک ہفتے سے لڑائی کے نتیجے میں اب تک 21 شہری مارے جا چکے ہیں جبکہ ڈھائی سو افراد زخمی ہوئے ہیں

جبکہ سرکاری فوج کی جانب سے طالبان کے مورچوں پر فائرنگ اور گولہ باری کا سلسلہ وقفے وقفے سے جاری ہے ۔دوسری جانب شہر میں کھانے پینے کی اشیاء ،پانی اور بجلی کی قلت پیدا ہونے کے باعث عام لوگوں کی مشکلات بڑھ رہی ہیں

حبیب نامی ایک شہری نے اندیشہ ظاہر کیا کہ طالبان کسی وقت بھی شہر پر بڑا حملہ شروع کرسکتے ہیں ۔ہم اس سے قبل بھی دو مرتبہ شہر پر طالبان کا قبضہ دیکھ چکے ہیں اور اب ہم نہیں چاہتے کہ وہ دوبارہ شہر میں داخل ہوںاگر سرکاری فوجوں نے طالبان پر حملہ نہ کیا توشہر کا محاصرہ طوالت پکڑ لے گا ۔

قندوز شہر کے گردونواح میں گذشتہ کئی روز سے طالبان اور سرکاری فوج کے درمیان خونریز جھڑپوں کا سلسلہ جاری ہے ۔جبکہ منگل کے روز طالبان نے تاجکستان کو افغانستان سے ملانے والی سرحد پر واقع اہم شہر شیرخان باندار پر قبضہ کرلیا تھا جوکہ حالیہ عرصہ کے دوران ان اہم اور سب سے نمایاں کامیابی تھی

Translate »