آزادی ڈیسک


داسو بم حملے کی منصوبہ بندی افغانستان کی سرزمین سے ہوئی ،ملنے والے تمام شواہد این ڈی ایس اور را تک لے جاتے ہیں ۔وزیر خارجہ شاہ محمود قریشی کی پریس کانفرنس

حملے کی منصوبہ بندی افغان انٹیلی جنس ایجنسی این ڈی ایس اور بھارتی ایجنسی رانے کی اس کے علاوہ دہشت گردوں کو پاکستان میں معاونت فراہم کرنے والے تمام ملزم گرفتار کرلیا گیا ہے

وفاقی وزیر خارجہ شاہ محمود قریشی نے خصوصی پریس کانفرنس کے دوران کہا تحقیقات کے دوران یہ واضح ہوا کہ ان (دہشت گردوں کا )کا پہلا نشانہ داسو ڈیم نہیں تھا بلکہ وہ دیامیر بھاشا ڈیم کو نشانہ بنانا چاہتے تھے ۔لیکن جب انہیں وہاں کامیابی نہ مل سکی تو انہوں نے دوسرا آپشن استعمال کرتے ہوئے داسو ڈیم سائیٹ کو نشانہ بنایا

وزیر خارجہ شاہ محمود قریشی نے کہا ہماری تحقیقات کے مطابق داسو بم دھماکے کیلئے افغانستان کی سرزمین استعمال ہوئی


یہ بھی پڑھیں 


پاک چین بڑھتا ہوا معاشی تعاون دشمنوں کیلئے پریشانی

اس حملے کی منصوبہ بندی کے تانے بانے واضح طور پر این ڈی ایس اور را کے درمیان ملے ہوئے نظر آتے ہیں
یہ گٹھ جوڑ کیوں ہوا اور وہ کیا چاہتے ہیں ؟ ہماری نظر میں کچھ عناصر ہیں جو پاکستان میں چین کی سرمایہ کاری اور دونوں ممالک کے مابین بڑھتاہوا معاشی تعاون ان کیلئے پریشان کن ہے اور وہ اسے خائف ہیں

واضح رہے کہ 14 جولائی 2021 کو ضلع کوہستان کے علاقے داسو میں بنائے جانے والے ہائیڈرو پاور پراجیکٹ پر کام کرنے والے انجنیئرز کی گاڑی کو بم حملے کا نشانہ بنایا گیا جس میں 9 چینی شہریوں سمیت 13 افراد جاں بحق ہوگئے تھے

یہ ضلع کوہستان میں اپنی نوعیت کا پہلا اور چینی منصوبوں پر بڑا حملہ تھا ۔جس کے ردعمل کے طور پر چین نے پاکستان سے حملہ میں ملوث عناصر کےخلاف سخت کاروائی کا مطالبہ کیا تھا ۔

بعدازاں ایک چینی اخبار نے دعویٰ کیا تھا کہ داسو ڈیم اور دیامیر بھاشا ڈیم کی سیکورٹی پاکستانی حکام نے فوج کے حوالے کردی ہے اور ابتدائی طور پر فوج کی تعیناتی کا عمل شروع ہو چکا ہے

Translate »